سوچو تو سہی

10346525_291152757736144_4074733604929174168_n سوچو گر کوئی جنت نا ہو
سوچو تو سوچ بھی سکتے ہو
نہ کوئی دوزخ پاؤں تلے
بس ایک کھلا آسمان ہمارے اوپر
سوچو گر سارے انسان بس آج کے لئے جیئیں تو

سوچو نا کوئی سرحدیں ہوں نا کوئی ریاست
کوئی ایسا مشکل تو نہیں
نا کوئی وجہ مارنے کی نا لڑنے کی
اور نا ہی کوئی مذہب
سوچو گر سارے انسان بس امن سے رہیں تو
 
شاید میری بات ایک خواب معلوم ہو
پر ناممکن تو نہیں
کاش اک دن تم بھی ایسا سوچ سکو
اور یہ دنیا کے لوگ سب ایک ہوکے رہ سکیں

….
جان لینن کے گانے “امیجن” سے ماخوذ

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s